نشئی کا نشہ ٹوٹ رہا ہو تو وہ کیا کیا حرکتیں کرتا ہے ؟

نشئی کا نشہ ٹوٹ رہا ہو تو وہ کیا کیا حرکتیں کرتا ہے ؟

جب نشہ ٹوٹ رہا ہو تو نشئی کا کیا حال ہوتا ہے ؟

(دینہ سے قرطبہ ہجرت کی داستان قسط داہم )
دوران برطانیہ کچھ عرصہ ہم نے برمنگھم کے قریب چھوٹے شہر walsall والسال میں گزارہ جہاں پر پاکستانی و بنگلہ دیشی و انڈین گجراتی مسلمانوں کی اچھی خاصی آبادی ہے چھ کے قریب مساجد ہیں
پاکستانیوں میں اکثریت دینہ جہلم اور میرپور کے لوگوں کی تھی
مسجد عائشہ کا اسلامک سینٹر دیکھ کر خوشی ہوئی کہ یہ مسجد باقاعدہ تعمیر کی گئی ہے اور اس میں کار پارکنگ اور بچوں کے لئے پلے گرونڈ بھی ہے اور اس کے اندر کیچن بھی ہے اور لائبریری اور کمپیوٹر سینڑ بھی
اور شام کو بچوں کا اسلامی اسکول بھی جہاں باقاعدہ نصاب مرتب کیا گیا ہے بچوں کو اردو اور قران اور اسلامی تعلیمات پڑھانے کےلئے
برطانیہ میں اکثر مساجد گھروں کو یا پرانے چرچوں کو خرید کر بنائی گئی ہیں جہاں اس قسم کی سہولتیں نہی ہوتی ، لیکن یوکے اسلامک مشن کا یہ اسلامی مرکز ایک مثالی اسلامک سینٹر ہے اس سینڑ کے بانی ارکان میں بہاولنگر کے مولانا سعید صاحب جو انگلش زبان پر عبور رکھتے تھے اور بچوں کے ساتھ گھل مل جاتے تھے میرے لئے یہ بڑی حیران کن بات تھی عموما علما کو اتنی اچھی انگلش بھی نہی ہوتی اور دوسرا وہ بچوں میں اس قدر مقبول نہی ہوتے ،

جس جنرل اسٹور پر کام کرنے کو ملا وہ دینہ سے تعلق رکھنے والےچوہدری طاہر صاحب کا تھا جو اسی کی دہائی میں برطانیہ آئے تھے میں اور بڑے بھائی ریاض ایک دن کام کر رہے تھے کہ ایک پاکستانی بوڑھی خاتون آئیں اور پوچھا بیٹا پکی روٹی ہے ؟ بھائی جان نے کہا جی آپ یہیں رکیں میں لے آتا ہوں برطانیہ میں پیٹا بریڈ اور نان پیک شدہ فروخت ہوتے ہیں بھائی جان وہ لے آئے مائی صاحبہ نے دیکھا تو بولا نہی نہی مجھے یہ نہی چائیے پکی روٹی کتاب چاہیے دوکان کے مینجر میاں صاحب نے ہمیں بتایا کہ اسلامی حکایات پر مبنی ایک کتابچہ ہے پکی روٹی جو پچاس ساٹھ کی دہائی میں لکھا گیا تھا ہماری بوڑھی خواتین اپنے گھروں میں اسلامی تہواروں پر اسے پڑھتی ہیں ،
ہمارے گاہکوں میں بنگالیوں کی بھی بڑی تعداد تھی
مچھلی کے علاوہ بنگلہ دیش سے آنے والی سبزیوں کے ساتھ ساتھ پان کے تازہ پتے خریدنے آتے
ایک دفعہ پان کے پتوں کی ڈیلیوری بنگلہ دیش سے لیٹ ہو گئی تو دو تین دن تک کئی بنگالی بابے روزانہ آ کر پوچھتے کہ پان آیا
تیسرے دن ایک بنگالی بابا ہمیں کہنے لگے کہ بیٹا ہمیں وہ جگہ بتاو جہاں تم اپنی سبزی کی ٹوکری پھینکتا ہے جس میں پانوں والی ٹوکری بھی ہوتا ہے ہم نے پوچھا بابا اس کا کیوں پوچھ رہے ہو کہنے لگے اس ٹوکری کے ساتھ کوئی ٹوٹا پھوٹا پان کا پتہ لگا ہو گا ہم اس سے گزارہ کر لے گا ابھی اور انتظار نہی ہوتا
سچ کہتے ہیں نشہ بری چیز ہے

img_0840

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *